‏WHOنے بیڑہ غرق کرنے کے بعد مکمل یوٹرن لے لیا ہے. کرونا ایک مریض سے دوسرے مریض میں منتقل نہیں ہو سکتا.WHO

بریکنگ نیوز… ‏WHOنے بیڑہ غرق کرنے کے بعد مکمل یوٹرن لے لیا ہے کہ کورونا کے مریض کو نہ تو آئسولیٹ ہونے کی ضرورت ہے نہ سماجی فاصلہ کی ضرورت.
دنیا کی معیشت تباہ ہونے کے بعد WHO نے 360 ڈگری یوٹرن مار دیا اور کہا کہ کرونا ایک مریض سے دوسرے مریض میں منتقل نہیں ہو سکتا.
WHOنے بتایا کہ COVID-19 کا غیر متزلزل پھیلاؤ “بہت کم” ہے ، لہذا جسمانی دوری اور چہرے کے ماسک ضروری نہیں ہیں.
غیر شناخت شدہ یا ماہر نفسیاتی کون ہے اس کی نشاندہی کرنا ایک مشکل کام ہے کیونکہ اس کے لئے بار بار جانچ کی ضرورت ہوتی ہے جس میں بہت وقت افرادی قوت اور وسائل کا مطالبہ ہوتا ہے اس طرح جسمانی دوری اور چہرے کے ماسک یا چہرے کے احاطہ کو استعمال کرنے کی سفارش کی گئی ہے تاکہ ایک موثر تاکہ مؤثر طریقے سے اپنے آپ کو محفوظ رکھا جا سکے.
ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن کے عہدیدار ڈاکٹر ماریہ وان کے تبصرے کے بعد بھونچال آگیا کیونکہ انہوں نے کہا تھا کہ چہرے کے نقاب پوش ہونا ضروری نہیں ہے چہرے پر ماسک ہونابھی ضروری نہیں ہے.
اس سے کوئی خاص فرق نہیں پڑے گا.
بہت سے لوگوں نے ڈبلیو ایچ او کے اہلکار کے اس بیان کی ترجمانی کی ہے کہ اس طرح کے اقدامات کی کوئی ضرورت نہیں ہے.
پوری دنیا کی معیشت بہت پیچھے چلی گئی ہے اور اب ڈبلیو ایچ او کے نمائندہ کہہ رہے ہیں کہ یہ کوئی خاص بیماری نہیں ہے اور یہ ایک دوسرے سے بھی نہیں پھیلتی یہ ہمارے لئے ایک لمحہ فکریہ ہے.

2 تبصرے “‏WHOنے بیڑہ غرق کرنے کے بعد مکمل یوٹرن لے لیا ہے. کرونا ایک مریض سے دوسرے مریض میں منتقل نہیں ہو سکتا.WHO

اپنا تبصرہ بھیجیں